اُفق کے اُس پار 9 Reviews

By: Asma Hassan

 قیمت : 600 روپے بمع ڈاک

 

 معاشرتی جبرو استحصال اور طبقاتی نظام نے انسانی زندگی کو مفلوج بنا رکھا ہے۔ صدیوں سال پرانی فرسودہ روایات پر چلتے رہنا،آنے والی نسلوں کو تباہی کے دہانے پر کھڑا کیے جا رہا ہے۔ ایسی اپاہج سوچ رکھنے والے حاکمِ بااختیار لوگوں نےغربت کو سولی پر چڑھا دینے میں کوئی کسر اٹھا نہیں رکھی۔طبقات اور اونچ نیچ کے درمیان قائم کی گئی حدِّ فاصل معاشرے کو بے راہروی اورگمراہی کی جانب دھکیلتی ہے۔"دلت اور برہمن " جیسے الفاظ کو جنم دینے والے،انسانی وقار و عظمت کی دھجیاں اڑاتے رہتے ہیں ۔ جہاں مظلومیت خاموشی کا لبادہ اوڑھ کر سوئی رہے،وہاں باطل سر اٹھا کر جیتا رہتا ہے۔ظلم و ستم سہنا اور چھوٹی چھوٹی خواہشات کی تکمیل کے لیے بلکتے رہنا،زندگی اور خوشیوں کو دیمک کی طرح چاٹتا رہتا ہے۔اربابِ با اختیار کے مثت فیصلے کس طرح  سے معاشرے پر اثر انداز ہو کر امید کی کرن دکھاتے ہیں ؟ معاشرتی نطام کی جڑوں کو کھوکھلا کرنے والی روایات کا گلا دبایا جا سکتا ہے یا پھر انہی شرائط پر زندگی گزارتے رہنا، بہترین فیصلہ ثابت ہو سکتا ہے؟

 

ISBN (Digital) 978-969-696-027-0
Total Pages 16
Language Urdu
Estimated Reading Time 20 mins
Genre Urdu
Published By Daastan
Published On 08 Dec 2017
Asma  Hassan

Asma Hassan

Short Story writer. Favourite Category in writing is "Afsana Nigaari" and "Novel Nigaari"

Reviews


Jan 11, 2018

Bht umdah likhti hain ap, lafz hai ya haqiqat, zamana bht agy ja chuka hai magar is Naam Nehad perhy likhy muashery main ajj bhi kuch jagahain esi hain jahan naam nehad wadaeray zulm o barbariyat ki daastanain raqam krty hain or sehny waly sehty rehty hn, laakhoun main koi aik hta hai jo zulm k khelaaf awazz uthata hai or uski awaaz main sb ki awaaz shaamil hujati hai. Kuch jumly perh k bht maza aya or unko baar baar perhny ko jee chaha, apki kitab ki shuruaat k chand jumly neechy darj krti hn, kitab ki ibtada hi itni mutasir'kun hu tu kitab apna asar zaror chorti hai.
طلب کوئی بھی ہو وقت کے دھارے پر بہہ نکلے تو انسان کو ننگے پاؤں سفر کرواتی ہے ۔خواہشات کا گھوڑا بھی  تو ننگی پیٹھ  والا ہوتا ہے جس کی کاٹھی ہوتی
ہے نہ لگام، بس منہ زور دوڑتا ہی چلا جاتا ہے۔زندگی کے  قرض اتارتے اتارتے  انسان کی کمر دونی ہو جاتی ہے. ماہ و سال صدیوں پر محیط ہو جاتے ہیں۔ افراط و تفریط کی زد میں آئے ہوئے معصوم لوگ، چند ساعتوں کی آسودگی کے عوض لگان  ادا کرتے کرتے  ڈھیر ہو جاتے ہیں۔ لاحاصل کا خوف  رگ و پے میں سرایت
کر کے ان کی  زندگی کو دیمک  کی طرح چاٹتا رہتا ہے۔

khush rahiye.

Mamoon Raza

Rating:

Mar 28, 2017

Mamoon

Sobia Athar

Rating:

Mar 12, 2017

بہت عمدہ تحریر ہے اسماء جی ویلڈن اور شکریہ ٹیم داستان اور قصہ کا جن کی بدولت عمدہ تحریریں پڑھن ک ملیں۔

Fahad Ch

Rating:

Mar 04, 2017

An old topic, nothing new but handling of narrative, words is exquisite which makes it readable.

Feb 12, 2017

معاشرے کے کریہہ چہرے کو بے نقاب کرتی زوردار تحریر. شخص مر جائے تو بھی شخصیت زندہ رہتی ہے! وشنو کا کردار بہت جاندار ہے. بہت سی داد قبول کیجیے.

Hira Raja

Rating:

Feb 10, 2017

Nice story

Asma Hassan

Rating:

Jan 28, 2017

Thanks a lot . Syed bilal Pasha and Mekaael Anwer.main comments read nahi kar pa rahi .magar aap logon ne jo ise rating di hai .. bohat maani rakhti hai ..thanks.

Jan 28, 2017

??? ???!!!?

Jan 25, 2017

zbrdstttttttt mam Asma Hassan .you are wonderful Writer.ap ki story buht mature and dialogues are awesome.many congrts.

Books in Same Genre