پہلی کوشش 1 Reviews

By: Khurram Sheikh Ali

 

یہ میری درینہ پہلی کوشش، میری اہلیہ صبا کے نام

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

4

 اجالے

رات میں  ُاجالے کی کھوج کروں 

تیری محبت میں خود کو رُسوا کروں

 

تو ہو گر پاس تو یہ دوری کیسی 

پروآنا ہوں شماع سے دُوری کیسی

 

ہوتی جو تو دُور ،  ُملاقات کی آرزو  رکھتا

آنکھوں سے ہوتے ہوے دل کاُسفر رکھتا

 

عجب کرشما ہے خالق خود کی تخلیق سے اُوجھل

  کہنے کو ہیں جیون ساتھی پر جیون  سے اُوجھل

 

دل کو تو دل سے  راہ ہوتی  ہے 

پاس رہے کے بھی کہاں بات ہوتی ہے

 

ُخرم زندگی بیت گی  ، پلک جھپکانے میں

غم نہ کر باقی ہیں صفحے تیرے فسانے میں

 

 

 

 

        

محبت

 

دل سے جو صدا نکلے وہ محبت ہے

جو ہیر نے رانجےسے کی وہ محبت ہے

 

کوئی اَنا نہیں جہاں خالص محبت ہے

کون کب کہاں ،سمجھا کیا محبت ہے

 

آرزویں جہاں ُقربان ہوئیں وہاں محبت ہے

دل کی گہرائیوں سے آواز آئے وہ محبت ہے

 

عاشق سرآپائے احتجاج ہوے دیکھ کہ بے مُروت ُدنیا

کمال ہے ُخرم! محبت سرشار رہے جیسی بھی ہو دنیا

 

 

 

 

 

 

          

 

 

 

 

 

مٹی

 

مٹی سے بنے ہو مٹی میں مل جاؤ گئے

جو کرنا ہے کر لو پھر خواب بن جاؤ گئے

 

 

کتنی محنت کتنے اثاثے تم بناؤ گئے

پھر آخر مٹی میں ہی مل جاؤ گئے

 

پیٹ کے نام دولت کے انبار لگاؤ گئے

لالچ کے سمندر میں بہتے مٹی میں مل جاؤ گئے

 

افراتفری میں حق و باطل میں تمیز  بھول جاؤ گئے

جھوٹی انا کی چادر ُاوڑے پھر مٹی میں مل جاؤ گئے

 

 سرفروشی کے عالم میں اپنوں کے دل دھکاو گے

  ُخرم  ، مٹی سے بنے ہو مٹی میں مل جاؤ گے 

 

 

 

 

 

 

 

 

           

 

دولت

 

راہی ہیں مسافر ہیں سب

راستے جدا منزلیں ایک ہیں سب

 

ہے سب فانی تو یہ تگودو گو کس لیے

سفر میں اتنی لالچ کاُرحجان کس لیے

 

عیش و عشرت کے مداح ہیں آج سارے

مال زخیرے میں لگے کیوں آج سارے

 

اور سے اور کی دوڑ میں ہیں شامل سارے

چند روز  کےٰ مہمان بنے میزبان سارے

 

حاصل کیا ،فقط چھ فٹ کا بچھونا

آخرت کی خاطر ُخرم ،کیا دولت کمانا

 

 

 

 

 

 

 

 

                 

 

 

 بیگم

 

تیرا شکریہ ، تیری مخلص محبت کا شکریہ

میری زندگی کی خوبصورت وجہ بننے کا شکریہ

 

تو مہک ہے میری زندگی کی

کامل آرزو ہے تو ہر تمنا کی

 

بیوی میں اک سچا دوست ملنا 

ہر تیری ادا میں خودی سے ملنا

کمال ہے ُخدا کا جس نے تجھے بنایا

خوش شکل کے ساتھ دل نرم بنایا

 

جتنا بھی شکر کروں ُخدا کا کم ہے 

تجہی سے رنگین ،کائنات میری ہے

 

روشنی ہے تو میری زندگی کی

تو صبا ہےمیری ُخوشنما صبح کی

 

 

 

 

 

                      

بھائی

 

 

ُخوش نصیب ہیں وہ جن کے بھائی ہوتے ہیں

ڈھونڈنے سے نہیں ملتے بھائی انمول ہوتے ہیں

 

 

بچپن کے ساتھی ،ہم نوالا ،یہ بھائی ہوتے ہیں

محبت سے سرشار ، وہ بھائی وسیم ہوتے ہیں

 

دلوں کے رشتوں کو زبان کا سہارا نہیں

انکہی باتوں کو جو سمجھے وہ بھائی ہوتے ہیں

 

 اس جہاں میں،تیری دوستی لازوآل ہے وسیم 

خوش نصیب ہیں وہ جن کے بھائی ہوتے ہیں

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

                   

 

  بھائی کے نام

محبت رشتہ ہے دلوں کا ، سادگی ا بھائی چارگی کا

دل کو دل سے راہ  ، رشتہ  ایسا یہ   بھائی   کا

 

نہ کوئی حسرت نہ کوئی غرض ، راحت کا سامان جو کرے

سکوں وخوشی کی لہر سی دوڑے -بھائی کا ساتھ جو کرے 

 

تو ندیم ہے بھائی میرا کمال پہ کمال کرے

تیرا اٹل ارادہ ، ہر کام تیرا لاجواب کرے

 

بھائیوں میں بھائی ہے تو میرا

دل کی جان ، تکبر ہے تو میرا

 

نہ کہتے کہتے ، بہت کچھ کہے بھی گئے  چلتے  چلتے   ندیم

ُخوش بختی کے عالم میں خرم بھائیوں کی صحبت سویرا

 

 

 

 

 

 

 

                  

  

بیٹیاں

 

 

کہتے ہیں بیٹیاں رحمت ہوتی ہیں

در و دیوآر میں رخسار ہوتی ہیں 

آنکھوں کی ٹھنڈک دل کاسکوں ہوتی ہیں 

 

معاشروں کی قدروں کی بات ہوتی ہیں

بیٹیاں تو بس انمول ہوتی ہیں 

ہوں بیٹے یاں بیٹیاں گھر کا سکوں ہوتی ہیں

 

وقت کا معلوم نہیں بیٹی کب جوآن ہوتی ہیں

اپنے جیون ساتھی کے ساتھ سسرآل کی ہوتی ہیں

 

تیرے قدم پڑھنے سے ہر آنگن مہک جائے 

تو پیکر ردا سی ہر دل میں گھر کر جائے 

 

خوش اخلاق سیرت ہے تیری

چاند کی چاندنی سی مُسکان ہے تیری

 

دیکھ کے تجھے تو گل بھی شرماُ جائے 

تو ماما پاپا کی لاڈلی ہر دکھ کو پی جائے

 

 

یاد تو آئے گی بہت اپنے پیا کے ساتھ رخصت ہونے کے بعد

نہ جانے کیوں احساس ہوتا ہے وقت کے گزر جانے کے بعد

 

اپنے جیون ساتھی کے ہمرا تو اب چلی 

کروڑوں دعاویں لے کہ توُ  اب  چلی

 

یہی ریت ہے بیٹی رخصت ہو ساجن کے سنگ

خوش و ُخرم  رہنا  تاحیات  ردا علی کے سنگ 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

            

  رمضآن

 

 

لو پھر  رمضآن شریف کی آمد ہے

مبارکوں کے دور کا سلسلہ شروع ہے

 

نیتوں میں کھوٹ ہے جھوٹ پہ ذور ہے

لو پھر سے رمضآن میں معافی کے طلب گار ہیں 

 

کیسی روش میں چل پھڑا ہے مسلمان 

حق اور باطل کی تمیز کھو چلا ہےمسلمان

 

ریاکاری میں ملوث پرہیزگار بنے چلا ہے مسلمان

لو پھر سے رمضآن میں معافی کا طلب گار ہے مسلمان 

 

مزہب کی آرڑ میں کتنا اور گرے گا یہ انسان

خودغرضی میں مبتلا رمضآن میں معافی کا طلبگار ہے مسلمان

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

                           

  عید

 

 

رمضان کے جانے کا دکھ اور عید کے آنے کی خوشی

عجب سلسلہ ہے قدرت کا ہر دکھ کے بعد ہے خوشی

 

محبت کا بھائی چارگی آخوت کا پیغام لاتی ہے عید

مسلمانوں  کے چہروں پہ مسکرآہٹیں لاتی ہے عید

 

 دل میں خلش کے باعث بھائی جو آپس میں نہیں ملتے 

عید کے روز ہر اک ہم بازو ہوئے دشمن بھی گلے ملتے

 

محبتوں کا دور شروع عید کی روایت ہے کچھ ایسی

تمام شکوے ترک زندگی خوشگوآرسی لگے کچھ ایسی 

 

سب کو دل کی گہرائیوں سے عید مبارک 

 خوش و خرم کی طرح رہو سب کو عید مبارک 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

                            

 عادت 

 

خون کے رشتے بھی حسد کاشکار ہوئے

دن کے اجالے ، تاریکی میں مبتلا ہوئے

 

دوست تو ُدور ، یہاں تو بھائی بھی  بھائی نہ  رہے

حوس کی روش میں اب ،نمازی بھی نمازی نہ رہے

 

جھوٹ ، فریب اب حق بنا پھرتا ہے 

حاضر میں ہر اک خودعرض بنا پھرتا ہے

 

نبی کی سیرت پہ عمل کرو گر مسلم ہوتُم

سچے ایماندار حسد سے پاک گر مسلم ہو تُم

 

ُخرم دل میں کچھ اور زباں میں کچھ اور رکھتے ہو 

آنکھوں سے ہوتے ہوئے دل میں اثر رکھتے ہو

 

 

 

 

 

 

 

 

                        

 زندگی

 

سانسوں پہ قابو نہیں  دل کی دھڑکنوں پہ عبور نہیں

کل کا سورج دیکھنا  ہو نہ ہو، اس  کا  بھروسہ نہیں 

 

کسی کا بھی یہاں کچھ بھی نہیں

دولت شہرت کا کچھ فائدہ نہیں

 

زندگی کے حصول  کا مقصد  زخیرہ خیزی

سمجھ آتی اگر ہزاروں سال کی حیاتی ہوتی

 

خواب سی ،ذہن کا فتنہ ہے زندگی

کبھی سبزا کبھی خزاں  ہے  زندگی

 

کہنے  کو تو  طویل ہے یہ زندگی 

پلک جھپکتے ہی تمام ہوتی یہ زندگی

 

زندگی کے راز افشاں ہوں گے آہستہ آہستہ

غم نہ کر خُرم قُرآن کی سمجھ آئے آہستہ آہستہ

 

 

 

 

 

 

             ِاسلام

                 

ُُشروع ہوا ُقرآن ِاقرآ سے

حصولِ  دآنائی  ُقرآن سے

 

جاہلیت ُدور ہوئی  درس و تدریس سے

 ُپیغامِ محمدٌی کا محورِ کامل ،غوروفکر سے 

 

تحقیق و تنقید کی بنیاد پڑی ِاسلام سے

علومِ ِجددت کو ترغیب ملی ِاسلام سے

 

الخوارزمی،ابنِ سِنا علی جیسے دانش کندہ ہوئے اِسلام سے

ُخوش خیالی کے ُدور میں  ہوئی تخلیقی ُجستجو اسلام سے

 

کہاں سے کہاں آگئے ُمسلمانِ ُخوآبِ بیداں سے

تاریکی میں ڈوبے جو ُدور ہوئے مُسلمان ُقرآن سے

 

ُخودی کو ُبھولے تو ذلتِ آمیز ہوئے کائنات سے

اپنی انآ میں ڈھوبے باطلِ فتنہ کی  مروت  سے

 

قدرِ ِانسانی تھی مرکز ، ریاستِِ مدینہ سے

میانہ روی پیمانا تھا حق کے زمانے سے

 

 

 

تبلیغِ ِاسلام کریں آج حضور  ، جھوٹ و فریب کے دآمن سے

مومن کی ترجیہات ُبھول گئے، ُخرم مسلمان بنے فقط ُُقرآن سے

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

     نفس

 

 

ہم بولیں جھوٹ اب کچھ اس طرح

کبھی سچ بولا کرتے تھے  ُاس طرح

 

عجیب عادت سی ہوگی ہے اب تو ایسی

غفلتوں کے حامل پھر کہیں قسمت ہماری ایسی

 

قدرت سے شکوہ ہم روز کریں

اپنی کوتاہیوں کو دوسروں کے سر کریں

 

راتوں کو دیر تک شوروغل کریں

پھر صبح تھکاوٹ کا رونا کریں

 

اپنی آن کے آگے کچھ نہ دیکھیں

انفرادیت کے بیمار اور کچھ نہ دیکھیں

 

اجتماعیت کے فروغ کی خاطر ہوتی جمہوریت

سب ہوں برابر مساوآت پہ مشتمل ہوتی جمہوریت

 

 

بنیادی حقوق جیسے پانی بجلی روٹی محیا کرنا کام وزیروں کا

بیروزگاری میں بشر کیا کرے ، کیا کام یہاں وزیروں کا

 

مال بنانے میں لگے ہیں یہاں سارے لوگ

ضمیر کا سودا کریں روز یہاں سارے  لوگ 

 

جب خود ہی نہ طلبگار ہوں گے بہتر زندگی کے

کچھ بھی کر لیں دانشمند ،حالات نہ بدلیں زندگی کے

 

ہوُحبشی فرنگی یاں مزہبی کوئی فرق نہیں پڑتا

اسلام میں ہے برابری پیشے سے کوئی فرق نہیں پڑتا

 

تبدیلی کی باتیں تو یہاں سب کرتے ہیں

نفس پہ ُخرم قابو پر یہاں کون رکھتے ہیں

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

            بستی

 

جس بستی میں رہتا ہوں وہاں سب فرشتے ہیں

ُدودھ کے ُدھلے ماں کی آنکھ کے تارے سب فرشتے ہیں

 

مٹی کا پتلا انسان بن نہ سکا  ، فرشتا بننے چلا ہے

الللہ خیر کرے اب تو انسان ناوضوبلا خدا بننے چلا ہے 

 

دیکھتے ہی دیکھتے صبح کا ُاجالا ہونے کو ہے 

پر اب بھی مسلمان تاریکی میں ڈھوبنے کوہے

 

دل کب ساکت ہو کس کو یہ خبر 

کون کیسا ہے ، رکھیں سب کی خبر

 

مٹی سے بنے انسان کی اپنی کیا بساط 

یہاں ہر کوئی بھیٹا ُخرم لئے اپنی اوقاط

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

                           ماں

 

ایسا رشتہ ہے یہ جس کا کوئی بدل نہیں

ُدکھ کیا ہے پوچھو ُاس سے جسکی ماں نہیں

 

ممتا کیسی ہوتی ہے کوئی کیا  جانے

جس کی ماں ہی نہیں ،وہ کیا جانے

 

اپنا سکوں چین بچوں پہ جو نچھاور کرے

دل سے ممتا جاگے ،ماں ہو تو اظہار کرے

 

ہر جزبہ بے رنگ  ہے  تیرے  آگے

ماں نہ ہو توکوئی روئے بھی کس کے آگے

 

خوش نصیب ہیں وہ جن کی ماں ہیں حیات 

ُان سے پوچھو جو پچھتاتیں ہیں اب تاحیات 

 

ُاس جیسی محبت نہ ملے کسی اور سے

گویا خدا کی رحمت نہ ملے محرومی سے 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

محبت کی مورت ، آنکھوں کی ٹھنڈک ہے ماں

دل بے سکونی میں روئے جن کی ہوتی نہیں ماں

 

جس کی تھی کبھی زندہ ، دل جان تھی ماں

اب نہیں تو ترسیں  یہ آنکھیں تجھی کو ماں

 

قدر کر لو جب تک ہے تمہارے پاس یہ انمول سرمایہ

دنیا سے رخصت جو ہوا لوٹ کے نہ آیا پھر یہ سایہ

 

جسکی ماں نہیں گویا ُاس کی محبت سے شناسائی نہیں ہوتی

ماں احساس ہے ُخرم  ایسی محبت کی مثآل نہیں ہوتی 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

                   بے چاری ماں

 

کیسے کوئی  ماں کو ظالم  کہے

ہاتھ سے مارے لفظوں کے تیر 

جھوٹ و فریبی سازشوں کے تیر

ماں کو کوئی ظالم کیسے کہے

 

 بیٹےکو بہو کے خلاف کہاں یہ کہے

بیچاری ماں کو کوئی ظالم کیسے کہے

 

بیٹی کی پیدائش پہ دل ازاری کرے

ماں کو کوئی ظالم کیسے کہے

 

تلخ تانو سے گھر کا ماحول خرآب کرے

ماں کو کوئی ظالم کیسے کہے

 

اپنے ہی بھائی بہن کے ساتھ عجب سلوک کرے

ماں ہی کی باتوں میں آکے کوئی ماں کو ظالم کیسے کہے

 

بیٹی بہن بھی ہے اور پیاری ماں بھی بن جائے

ماں کی تربیت ماں سے ہی پا کہ پھر ماں بن جائے 

 

 

 

تمام ستم ختم ہوئے اس کے آگے

ماں کو کہے کوئ ظالم تو  کیسے کہے

 

کوئی بیٹا ماں کے خلاف کچھ بھی کیسے سنے 

اپنا گھر  برباد کرے ماں کو کوئی ظالم کیسے کہے

 

آج کوئی گھر نہیں جہاں خشگواری ہو

ماموں چاچا پھوپھیاں کیا کسی سے نباہی ہو

 

ماں کے فیصلوں کے خنجر چلیں ہوں

پیاری ماں کو کوئی ظالم کیسے کہے

 

معاشرا گھر سے بنے ، آج ہر گھر پہ ہےماتم

تو جہنم کا عکس لگے پر ماں کو ظالم کیسے کہے

 

خود عورت لڑکی تھی ، پھر  بنی ماں

بیٹا ہی چاہیے، خود بیٹی پھر بنی ماں

 

کمال کی غلیظ سوچ ہے

ماں کو کوئی ظالم کیسے کہے

 

لعنت ہے ایسے گلستان میں جہاں مہک کا فقدآن ہو

کہنے کو ممتا کے گیت گائیں جہاں بیٹیوں کا قتلِ عام ہو

 

 

 

 

 

ماں ماں کہےکے نہیں تھکتا بچہ تمہارا 

اپنی اولاد کے ُدشمن بنو یہ کام تمہارا

 

بیٹی نہیں چاہیے اس بیچاری ماں کو

بھوج لگتی بیٹی ،اس بیچاری ماں کو 

 

بچپن میں ماں کا ہر کہا پتھر پہ لکیر ہوتا 

اب خالق سے بہتر رہبر کون ہوتا 

 

اپنی نسلیں برباد کیے ،نظریے بدلے جاتے ہیں

لڑکپن سے اپنوں کی غیبتیں کیے جاتے ہیں

 

نہ جانےکون سے مسلمان ہیں یہ  درحقیقت انسان بھی نہیں

دشمن کہاں درکار انہیں ُخرم ،ممتا کو کوئی  ظالم کیسے    کہیں 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

دور

 

 

حال اور ماضی کا یہ فسانہ ہے 

حال کا ماضی بننا یہ بہانہ ہے

اصل میں حال ماضی کا سایہ ہے

باقی کچھ نہیں بسں انسانی مآیا ہے

 

 

اقبال دور اندیشی میں حقیقت بیان کر گیا

مسلم کو آئینہ  بھری محفل  میں  دکھا  گیا 

 

خوش نصیب ہیں وہ جنہیں میسر ہے آزادی 

پاکستان کا وجود بنا ُامتِ مسلمہ کی  آزادی

 

 

 

 

                     

 

  گفتگو

 

 

جہاں سے میں بات کروں، ضروری نہیں وہ وہاں سے سنے 

اذدوااجی ذندگی خراب ہو ،      جب ہم خیالی کا فقدان    بنے 

گفتگومیں خشگواری  ہوتی جب  غقل دآنآیئ  فکر ترغیب  بنے

محبت وقت کے ساتھ بڑھے پہلےتو جان پہچان دوستی بنے

 

کہی بات کو سمجھنا حق سماعت پہ میسر 

ذہنوں کے میعار  کے تسلسل پہ میسر

کسی بھی بات کو سمجھنے کے پہلو بہت

کیا سمجھنا کیا سمجھانا منتقی گفتگو  پہ میسر 

 

کیا  کہا،  کیا سنا۔ کس   نے   جانا   ہے

یہاں تو ہر اک کی یہی کہانی فسآنا ہے

دل نے کہا دماغ   سے  ،چھوڑو  جآنے  دو   یار

خرم ،بے شکنی تمہاری،  جیت بھی ہے   ہار 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 میرے نبی

 

 

کیا سماں ہو گا جب سامنے نبیوں کے نبی کا در ہو گا

میں بے ساختہ دیوآنہ تیری  بارگاہ  میں گداگر ہوں  گا

 

مدینہ کی فضاؤں  میں تیری  گھونج محسوس کروں  گا

مدینہ کی مٹی میں تیرے قدموں کی چھاپ چوموں گا

 

جز باتوں کا عجب دَور مدینہ کی دہلیز  پہ  ہو گا

البقی، حجرے اسود کے سامنے میرا کیا ہو گا

 

خود کو تیری مجلس کے قابل کیسے کروں گا

کیفیت جو طاری ُاس کو قابو کیسے کروں گا

 

جس  کی ِ صفتوں کی قسمیں کھائیں  کفار بھی

میں ُاس درخشاں سے ُملاقات کیسے کروں گا

 

بے مثال احسوہ احسنہ کے مالک،ہم تیرے پیروکار ہیں 

مشعلِ راہ تجھ سے تیرے چراغِ زندگی کے طلبگار  ہیں 

 

ُکل کاینات میں میرے محبوب نَبِيّ کی کوئ  مثال  نہیں 

مشعلِ راہ کا محور ہے مُحَمَّد، ُکل انسانی میں کوئی ثانی نہیں

 

مُحَمَّد  پہ قربان تمام عیش و عشرت  خرم

یاالللہ،میرے نَبِيّ کی سیرت پہ رکھنا ہر قدم

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

                                   حیاتی

 

 

دل برداشتا ہے یہ سوچ کہ  وہ جو تھے اپنے   اب ہم میں نہیں 

جوآنی میں دنیا چھوڑ گے وہ رآہگیر،ہمسفر،ساتھی اب ہم میں نہیں

 

روز کوئی  آتا  ہے    کوئی  جاتا ہے

ہر کوئی اپنا نشان چھوڑے جاتا ہے

آنکھوں میں موتی ،  دل   دُکھی ہے

یادوں کے سہارے زندگی گزارنا ہے

 

جو ہیں آج  وہ کل نہ ہونگے 

حسرتیں بہت پر ہم نہ ہونگے

 

محبتیں ، خُوشیاں  بانٹ   لو  پہلے   کہیں  دیر  نہ   ہو   جائے 

آنکھیں ہوں نم اس سے قبل خوش و خرم کی حیاتی ہو جائے

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

                            

       دآستان

 

 

غلاضط سے بھرپور ہے یہ پاکی معاشرا

غلغٹ سا فریبی عیار اور مقار یہ معاشرا

 

نبی کی سیرت پہ عمل کرنے سعادگی کا ڈھونگ رچائں گے

دھاڑی اور قلف لگی شلووآر قمیض کا روب رچائں گے

 

مذہب کے نام پہ انسانوں کو غلآم بنائیں گے

اللہ کا نظآم کہے کے دل کو رجاہئں  گے

 

چوری اور سینا زودی میں اپنا ذہن لگائیں گے

محبوب نبی کا واسطا دے کہ کھل کے بیوقوف بنائیں گے

 

رنگ نسل میں تفریق نہیں  سب کو برآبری دی اسلام نے

 رنگ کی اب حیثیت کیا ، بلال کو بنایا موءزن پہلااسلام نے

 

اسلام کے درس کی گفتگو کریں گے بیشمار 

عمل میں کم نہ ہونگے جیسے مکہ کے کفار

 

کہنے کو تو ان کے لیے رنگت معنے نہیں رکھتی

 بیٹیاں سانولی پر گوری بھابیوں کی آرزو رکھتی 

 

 ہوں بیٹے بھی کالے تو چلے گا ،گوری بہو ملے تو ہی چلے گا

کمال کی دنیا یہاں ایمان اخلاق بعد میں پہلے مال ہی چلے گا

 

انسانیت وسیرت پہ کون جاتا ہے آج

فرنگیوں کا روپ ہی سب کچھ ہے آج

 

چونکہ عورت قیمتی اساسہ اس لیے پردے میں 

مرد کا کیا قصور ہے جو نہیں کسی خاطے میں

 

 

 

 

 

مُحَمَّد تھے ملازم حضرت خطیجا کے وسیع کاروبار میں

نَبِيّ کی شان ،اسلام ساآزاد خیال ،عورت کی حکمرآنی میں

 

قریب سولہ سو سال پہلے اک بیوہ کو نوکر سے محبت ہوئی 

اپنے نَبِيّ سا دوسرا نہیں، ہر اک کو مُحَمَّد سے  رفاقت ہوئی   

 

کیا کہنے تاریخ نفاست،  حقوق ولبعاد کی دآستان ہے ُقرآن

ُخرم کائنات کے تمام تر پوشیدہ راز افشاں کرے ُصرف ُقرآن

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

                             شادی

 

حیرت ہے یہاں تو کوئی کچھ بولتا بھی نہیں

معاشرے کے دباو میں یہاں کوئی جیتا بھی نہیں

 

دل دھڑکتا سانسیں بھی رواں 

زندہ لاشوں کا یہ عجب کارواں

 

خودغرضی اور لاچ میں اپنی اولاد کے رشتے کریں

بیٹی کی پسند نہ پسند برابر یہاں ہم بچوں کے سودے کریں

 

رخصتی تک سسرآل والوں سے اچھا کوئی نہیں ہوتا

ساس سسر نندیں اور دلہے جیسا ہیرا  کوئی نہیں ہوتا

شادی کے دوسرے روز سے ہی ساس سا ظالم کوئی نہیں ہوتا

ُاس نے محبت کی تو شادی کی ،محمد جیسا بھی اور کوئی نہیں ہوتا

 

 

انسانیت سے محبت نہیں تو اللہ سے کیسی یہ محبت 

الللہ کی خوشنودی حاصل نہیں تو ماں باپ سے کیسی یہ محبت 

 

ُدورِ قریش سے بہتر حال عورتوں کا اب بھی نہیں

مُحَمَّد کی سیرت کے خلاف ، ہوتے مسلمان تو نہیں

 

گل کھلیں صرف  گلستان میں، یہ ضروری تو نہیں

تاریکی کے بعد ُاجالا اب یہ ضروری تو نہیں

 

کہنے کو ہیں اشرف المخلوق یہ انسان اور مسلمان

نیتوں میں کھوٹ ، مایا کے پجاری ہیں یہ مسلمان

 

طلوع آفتاب کی پہلی کرن سے  ُاٹھے روشنی کے چراغ

ُطول و عرض میں چھایں خرم صرف قرآن کے چراغ

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

عنایت فاونڈیشن

 

درس گاہوں میں اک درسگاہ عنایت فاونڈیشن

سماعت سے محروم طلبا کی درسگاہ عنایت فاونڈیشن

 

لاہور گجھوماتھا میں واقع یہ منفرد ادارہ

سماعت سے محروم بچوں کا فلاحی ادارہ

 

جوہر والوں نے دھن من سے کھڑا کیا عنایت فاونڈیشن

ہر معیار پہ پورا اترے یہ قابل تعریف عنایت فاونڈیشن

غربت میں جہاں صحت مند بچوں کی تعلیم کا فقدآن

جو دوسروں کے آئے کام وہی ہے سب سے بڑا انسان

 

فرشتے نما انسان اب کہاں ملتے ہیں

تو وحید ہے ایسےلوگ اب کہاں ملتے ہیں

 

چھوٹا سا اک پودا اب درخت بن گیا ہے

یہ سکول بھی اب کالج ، تاریخ  رقم کر گیا ہے

 

ہر استاد اس سکول کا کمال کے جوہر دکھاتا ہے

اپنے رہنما کے شانہ بشانہ قدم بھڑآتا ہے

 

والدین کی خوشی کا ٹھکانا نہیں 

بچوں کی دانشمندی کا کوئی ثانی نہیں

 

پنجاب کے سکولوں کی فہرست میں نام پیدا کیا عنایت فاونڈیشن

ُُخرم ہے مستقبل روشن ، مزید نام پیدا کرے عنایت فاونڈیشن        

 

 

                                   حیاتی

 

دل برداشتا ہے یہ سوچ کہ  وہ جو تھے اپنے   اب ہم میں نہیں 

جوآنی میں دنیا چھوڑ گے وہ رآہگیر،ہمسفر،ساتھی اب ہم میں نہیں

 

روز کوئی  آتا  ہے    کوئی  جاتا ہے

ہر کوئی اپنا نشان چھوڑے جاتا ہے

 

آنکھوں میں موتی ،     دُکھتا دل ہے

یادوں کے سہارے گزرتا جیون ہے 

 

جو ہیں آج  وہ کل نہ ہونگے 

حسرتیں بہت پر ہم نہ ہونگے

 

محبتیں ، خُوشیاں  بانٹ   لو  پہلے   کہیں  دیر  نہ   ہو   جائے 

آنکھیں ہوں نم اس سے قبل خوش و خرم کی حیاتی ہو جائے

                                             

 

  

  دل ٓازاری

 

مطلب کے بغیر تو کوئی اپنا بھی کچھ نہیں کرتا

مفاد پرست !  کوئی دل لگی میں لالچ نہیں کرتا

 

پل میں بدلتے انسانوں  کے    رنگ   یہاں

محبت! ہوتی کیا میاں بیوی کے سنگ یہاں 

 

اپنوں کی باتیں تلخ لگیں  ہاں  موسمِ سرما  میں  ٹھنڈ لگے

 خلوص ِعزت لازم ہے محبت میں ُخرم  دل آزاری لگے 

 

 

 

زینت بیٹی

 

خوش رہنا صدا تم اپنے  ہم سفر کے  ساتھ

ہر گھڑی کو ُاجالے میں رنگنا اپنوں کے ساتھ

تیری رونق سے شاداب رہے تیرا ُسسرال

زینت رہنا تاحیات ُمسرتوں بھری محفلوں کے ساتھ

 

ہر باپ جس بیٹی کی تمنا کرے وہ تم ہو

تمام رونقیں جہاں بسیرا کرے وہ تم ہو

کوئل سی میٹھی تیری بولی ،بیٹی جو کمال کرے وہ تم ہو

ہماری زندگی میں ُاجالے کی کرن جس بیٹی سے وہ تم ہو

 

بیٹی ہو جس کی ُخرم ، وہ ہی ُدختر کی محبت جانے

دلوں کے رشتے بھرپور سہی لاشعوری میں جو محبت جانے

 

 

 

 

 

             پردیسی

 

پوچھو ُان سے جو فرنگیوں کے دیس میں کیسے آباد  ہیں

شناخت کھو بھیٹے ،نسلیں برباد کئے پردیس میں آباد ہیں

 

ظلم بھڑ جائے تو انسان بہتری کی راہ پکڑے 

روشن مستقبل کے غرض سے اپنا گھر چھوڑے

 

 بشر کیا کرے جہاں انسانیت کا فقدآن بنے

پیٹ ہو خالی کھلے آسمان تلے ننگا پھرے

 

فائدے بھی ہیں پر نقصآن  ہیں  بہت

اپنی پہچان کھوئے غافل خود سے بہت

 

قدریں بدل جاتی ہیں  لباس کے  ساتھ

تہزیب و تمدن فرآغ، نئی بولی کے ساتھ

 

 

جہاد لازم ہے غلآمانہ سوچ  کے  خاتمے کو

ہر مردِ مجاہد، ظلم کے خلاف آواز ُاٹھانے کو 

 

 خرم اپنا گھر جیسا بھی ہو اپنا  ہوتا  ہے

ہایےَ!  پرردیس میں پردیسی پردیسی ہوتا ہے

 

 

 

 

 

    

 

      دل جاں

بھولا ہوا اک فسانہ ہے تو

 میری سانسوں کا درینہ ہے تو

ملاقاتوں کا سلسلہ ہوا طویل

مجھے معلوم ،بس سپنا ہے تو

 

جب بھی تجھ سے بات  ہوتی

راہِ راست ُکھل کے ُملاقات ہوتی

 

وقت ساکت پہ مقیم رہتا

شبِ دیگ ہماری پوری رات ہوتی

 

کمال ہے تو خیال میں بھی حقیقت ہوتی

تیری آرزوں میں مر مٹھے ،عجب رات ہوتی

تمام حسرتیں تیرے آگے کمزور 

تو ملکآِئے حسن کی دیوی ، چاند رات ہوتی

 

میری بیداری تک تیرا ساتھ اچھا ہے

مجھے نیند میں رہنے دو ،سب اچھا ہے

زندگی تکمیل پزیر بس تیری آغوشی میں

خوف و فکر نہیں خرم !اب سب اچھا ہے

 

 

 

 

 

                 بچہ

خوش بخت ہے وہ جن کے باپ درخشاں  ہوتے  ہیں

ایسے بھی  ہیں ، باپ ہوتے ہوئے بھی یتیم ہوتے ہیں 

 

افسوس ایسے لوگ جز باتوں کا خون کرتے ہیں

اپنی جھوٹی   َانا میں  ُگھٹ ُگھٹ  کے جیتے  ہیں 

 

بچے دولت تو بعد میں پہلے محبت کے بھوکے ہوتے ہیں

 بچے  توجہ کے ساتھ شفقت  کے بھوکے ہوتے ہیں 

 

ُخرم رشتوں میں جکھڑے غلیض لوگ  کیا  جآنے

ُکیا کیوں کے چکر میں آپس میں اختلاف کئے جآئے

 

 

 

 

 

 

 

               منافق

ہر اک کو چودھری بنے کا شوق ہوا ہے 

رشتوں میں اماں بننے کا شوق  ہوا  ہے 

 

اپنی اولاد کو جو نکما اور بیوقوف ٹھرآئے گا

اپنے ہی بہن بھائیوں سے خنجر  چبوآئے گا

 

نام کے  ہوتے  ہیں  فقط یہ  رشتے 

غیروں سے زیادہ  دکھ دیتے  یہ رشتے

 

ہمت ملے بیٹی کو  جو ساتھ  کھڑا  رہے  باپ

ہر مشکل سے ٹکرا جائے دے ہمت اگر باپ

 

جو والدین  خود  ہی اپنے بچوں  کی چغل خوری میں مگن  ہوں

بدنصیبی کی انتہا ہو ماں باپ کے ہوتے کہاں دشمن درکار ہوں 

 

 

 

 

خوشی کا موقع ہے ہم کیوں نہ نآچیں گائیں 

شادی میں دلہا دلہن کیوں نہ نآچیں  گائیں 

 

چچا  تایا  کو مسلۂ تو   وہ اپنا   منہ چھپائیں 

ویسے دوست کی نجی محفلوں میں محہ رچاہئں

 

منافقوں  کی کمی نہیں  اپنے منہ  میں یہ  کالک  لگائیں

باہر  بھیگی  بلی خرم  گھر  میں  شیر  کی  دھاڑ   رچائیں 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

       میں لڑکی ہوں

 

زندگی میں  محبت کرنے   وآلا  چاہیے

کوئی ایسا انمول پیار کرنے وآلا چاہیے

 

دوست   بنے  نہیں شادی   کرنے   چلی ہوں

محبت سے نہیں صبر سے گزارا کرنے چلی ہوں

 

روز  زیادتی کا سبب    بننے    چلی   ہوں

اولاد   کو   پیدا  کرنے  میں   چلی  ہوں

 

ماں جس  کی ممتا   کے   گیت   گاتے   چلے 

ماں میری ُحرمت کا جنازہ رخصت کرتے چلے

 

ماں کے ساتھ بھی یہی ہوا تھا آگے دختر کی زندگی جہنم کرے

شکوہ شکایت جو کرے  بعد میں بیٹی سے قسمت کا رونا  کرے 

 

بچپن سے جوآنی تک ماں کی پرچھائی بنی رہی

کھانا بھی ماں کے ساتھ اکیلے میں  کھاتی رہی 

 

بھائیوں کو ترجیح ہاں میں سہتی رہی

میں شہزادی جسے آزادی میسر نہ  رہی

 

اب خدمت ہی کروں گی میاں اور ُسسرآل کی

اپنی تزلیل و تہزیک سہی پر ناک نہ کٹے آماں کی

 

ُسسرال والوں کی تو بچت  ،مفت  کی نوکرآنی بنوں  گی

جو باپ کے گھر نہیں کیا میاں کے گھر کی ماسی بنوں گی 

 

بیٹی بھی عجیب ہوتی باپ کا گھر بھی اپنا نہیں ہوتا

اولاد پالتی گھر بناتی پر  بیچاری کا اپنا  کچھ نہیں ہوتا

 

 

 

اب میں بھی  چلی ہوں  اپنے  شہزادے  کے  ساتھ

وفاداری اور بچوں کی ماں بنوں مقصد ُاس کے ساتھ

 

 

 

 

مجھے لینے  آگئے میرا باپ میرا  بھائی جنازہ اب  ُاٹھنے کو  ہے

ظلم سے شناسائی ہے تو روتے ،اور خوش و ُخرم کی ُدعا دیتے

 

 

 

 

وقت

 

کچھ رشتوں کو زباں کا سہارا نہیں ہوتا

ہر آنکھ  سے بہتا  پانی آنسو  نہیں  ہوتا 

 

جہاں پاکیزہ محبت وہاں  حسد نہیں  ہوتا

کوئی بھی بھائیوں سے بڑھ کے نہیں ہوتا

 

 

کیا کہا کیا سنا کوئی فرق نہیں پڑتا 

ُممتا کے آگے  اور کچھ نہیں ہوتا

 

 

ہر گزرتا لمحہ انمول   ، وقت  کسی کا نہیں ہوتا

تاریخ بن کے یاد آئے وقت کسی کا نہیں ہوتا

 

گزرتے   پلوں کو قید کر  لو کہیں  دیر   نہ ہو جائے

انسان ثانی ُخرم ،کل کہیں کوئی حسرت نہ رہ جائے

 

 

 

 

 

دھواں

 

کیا ہوا کہ آج مسلمان فرنگیوں کا مداح ہوا ہے

ہر اک نوجوان کو امریکہ یورپ کا بخار ہوا ہے

 

 

 

ویسےکہتے کافر ہیں یہ  فرنگی امریکہ سے  بُرا کوئی نہیں

پھر امریکہ کےخواب سجائیں ان سا ڈونگی کوئی نہیں

 

سب نصیب کی باتیں ہیں کہہ کہ خود کو رجاہئں 

کریں سب کچھ خود  ،الزآم دوسرے پہ لگائیں 

 

محنت   جو کرے  حق حلال   سے  کمائے 

سکونِ دل ملے ُخرم جو عاجزی سے  ُکمائے

 

 

 

خوشی

ُمسافر ہیں اس جہاں میں سب

مہمان بنے میزبان جہاں میں سب

 صرف چاہا سے کہاں یہاں کچھ ملتا ہے

سب پا کے بھی کہاں قلبِ سکوں ملتا ہے

 

 

خوشی کیا ہے کاش کوئی سمجھے

دین ہے تسکین جو کوئی سمجھے

خود غرضی کی چادر ُاوھڑے

منفی سوچ ،کیا خوشی کوئی سمجھے

 

تلاش میں کھوئے بٹھکے پھریں 

کس کی، یہ کہاں کوئی سمجھیں

نقلِ حرکت کے ماہر یہ زمانے میں

ُخودی کو چھوڑے کیا خوشی کوئی سمجھیں

 

افراتفری میں حق اور باطل میں تمیز بھولے

کیوں کیوں ہے اس سوال میں تمیز بھولے

انسان بنا مشین حقیقت اور خیال میں تمیز بھولے

کیا کریں لوگ ڈر میں دل اور دماغ میں تمیز بھولے

 

تمام تر فیصلے خود کریں نام لگایں  ُخدا پہ

سوچ سے ذیادہ ملے ،ہو بھروسہ جو ُخدا پہ

دل سے ِکیا کام ، ہر دل پہ اثر کرے

مانگے دل سے،قدرت بنے ذریعہ تقوہ جو خدا پہ

 

 

دل  کو سکون نہیں اور اور کی تمنا کرے

آسائشیں پوری پھر بھی اور اور کی تمنا کرے

سوال پوچھنا ضروری جو کچھ بھی سمجھنے کی تمنا کرے

ِاسلام نے دی آزادی ُخرم! جو غور و فکر کی تمنا کرے

 

 

 

غرور

غرور بہت ہو گیا آو تھوڑی عاجزی کر لیں

نازک ہوئے رشتے آو تھوڑی پیوند کاری کر لیں

 

فاصلے ہوئے دلوں میں آؤ تھوڑا سفر کر لیں

اولاد ہوئ باغی آؤ تھوڑا ہم کلام پھر کرلیں

 

جیتے تو سب ہیں آؤ تھوڑا ہٹ کے جی لیں 

فریبی لوگوں میں آو تھوڑا صبر کرکے جی لیں

 

بہت لڑ مر لیا آو تھوڑا امنِ احساس   سے جی لیں

شادی تو ارینج ہو گئ آؤ تھوڑا پیار محبت سےجی لیں

 

جھگڑے تو ہو گئے   آو تھوڑا  نرمی میں   جی لیں

مرنے سے پہلے خرم! آو تھوڑا سجدے میں جی لیں

 

 

 

 

 

عورت

مردوں کے جہاں میں عورت بیچاری

غیبت کی مورت یہ عورت بیچاری

 

ظالم معاشرے میں یہ مظلوم عورت بیچاری

رانی  لقب ، قربانیوں کا مرکز عورت بیچاری

ISBN (Digital) 978-0-359-75080-1
Total Pages 50
Language Urdu
Estimated Reading Time 3 hrs
Genre Poetry
Published By Lulu publisher
Published On 07 Sep 2021
No videos available
Khurram  Sheikh Ali

Khurram Sheikh Ali

میرا نام خرمؔ علی شیخ ہے۔ میں ۱۹۷۵ء میں ناروے کے شہر اوسلو میں پیدا ہوا۔ میرے والد بہتر مستقبل کی غرض سے۱۹۷۱ءمیں ناروے تشریف لائے۔ ابتدائی تعلیم میں نے St. Paul school کراچی پاکستان سے حاصل کی۔ بعد ازاں کالج پھر یونی ورسٹی آف اوسلو سےیوروپین تہذیب اور تاریخ پڑھی۔ اس سے قبل کمپیوٹر سائنس کا بھی طالب علم رہا۔ میرے اور سیکھنے کی جستجو تاحیات جاری رہےگی۔ ابھی بھی ناروے میں ہی مقیم ہوں اور اپنے اہلِ خانہ کے ساتھ خوشگوار زندگی گزار رہا ہوں۔

اردو سے لگاؤ بچپن سے ہی تھا مگر اردو سے محبت اور دلچسپی پیدا کرنے والی شخصیت مرحوم سر Gabriel کی تھی۔ جوSt. Paul English High School میں میرے اردو کے استاد تھے۔ کتابوں سے دلچسپی بچپن سے ہی تھی۔ میں کوئی شاعر نہیں ہوں نہ مجھے شعر کہنا اورلکھنا آتا ہے۔ یہ میرے جذبات احساسات ہیں جو قلم بند کرنے کی چھوٹی سی کوشش کی ہے۔

دنیا کو دیکھ کے، سن کے، جو جذبات ابھرے انھیں کاغذ پہ اتارا ہے۔ اپنے تمام اوراق جو ادھر اُدھر بکھرے پڑے تھے انھیں یکجا کیا ہے۔

Reviews


Faiza Nasir

Rating:

Dec 21, 2019

بہت عمدہ کوشش ہے

Books in Same Genre